اپنا فیس بک اپنا ٹویٹر کیوں بنائیں ؟؟

اپنا فیس بک اپنا ٹویٹر کیوں بنائیں ؟؟

ہر شخص کو اپنی بات کہنے کا پورا پورا حق حاصل ہے..چاہے وہ ٹی وی پر کہے،اخبار میں لکھے یا فیس بک پر…اظہار رائے کی آزادی کے لئے بقول آپکے ہر شخص اپنا فیس بک اپنا ٹویٹر بنانے لگ جائے تو صاحب ہوگیا کام…پھر تو میری خبر نا لگے اخبار میں تو میں اپنا اخبار چھاپ لوں… میری خبر نا آئے ٹی وی پر تو میں اپنا ٹی وی چینل کھول کر بیٹھ جاؤں… اور پھر ایسا ہو کہ ایک دن ہر بندہ اپنا اپنا ڈیڑھ انچ کا ملک لے کر بیٹھ جائے…ایسا تو کبھی مارک زکر برگ نے بھی نہیں کہا کہ: ”ارے جاؤ اپنا فیس بک بناؤ اور اپنا منجن بیچو“ بلکہ اس نے بھی لوگوں کے غم و غصہ کے اظہار کو محسوس کرتے ہوئے اپنی اور فیسبک کی صفائی میں کم ازکم گول مول بات تو کی…!!
بات صرف اتنی سی ہے کہ ہم لبرل ہوں یا سیکولر مذہبی ہو غیر مذہبی مسلکی ہوں یا غیر مسلکی، تحمل اور برداشت ہم سب میں نہیں..اگلے کے موقف کو تسلیم کرتے ہوئے اختلاف کرنا ہماری بے عزتی کے مترادف ہے.
پیرس سانحہ میں جتنی قیمتی جانیں ضائع ہوئیں اس کا دکھ ہر انسان کو ہے..فرانس ڈی پی تو بہانہ بن گئی.. دنیا میں بڑھتی بے حسی کے سبب نسلی ،مذہبی ولسانی امتیاز کے بعد جب انسان میں بھی امتیاز ہونے لگ جائے تو پھر اس بھپری عوام کو اتنا تو حق پہنچتا ہے کہ وہ اپنے فیسبک ٹویٹر بنانے کے بجائے میسر اور بہتر پلیٹ فارم پر اپنی بھڑاس نکالے.. کم از کم کسی کی گردن مارنے سے تو بہتر ہے نا..
اور ذرا دیکھ لیں نا چین کو، روس کو، اپنا فیسبک بناکر بیٹھیں ہیں ہم سے بہت پہلے سے.. کیا اکھاڑ لیا انہوں نے؟ کچھ نہیں نا!! ڈنکہ تو مارک زکر برگ کے فیس بک کا ہی ہے نا!!
اس لئے ہم نے فیسبک نہیں بنایا اپنا… بلکہ مارک زکر برگ کے فیس بک پر ہی دے مارا سارا کچرا…
اور ہاں اپنا فیس بک اور اپنا ٹویٹر بنانا چھوڑیں… اور مارک زکر برگ کے فیس بک اور جیک ڈورسی کے ٹویٹر میں گھس جائیں.
”ہم جہاں کھڑے ہوجائیں… لائن وہی سے شروع ہوجاتی ہے“
نوٹ: مذکورہ ڈائیلاگ میرے متعلق ہرگز نہیں بلکہ ہر اس لبرل سیکولر مذہبی غیر مذہبی مسلکی و غیر مسلکی سے متعلق ہے جو انسانی امتیاز کے خلاف جذبات رکھتا ہو.

اپنا تبصرہ بھیجیں